پالک کھانے سے آنتوں کے سرطان میں کمی ممکن

آنتوں کا سرطان تیزی سے پھیل رہا ہے تاہم پالک کھانے سے اس کا خطرہ کم کیا جاسکتا ہے

لندن(نیٹ نیوز)گٹ مائیکروبس نامی جرنل میں شائع تحقیق کے ماہرین نے ایک موروثی کیفیت کا جائزہ لیا جسے ‘ فیمیلیئل ایڈینومیٹس پولی پوسِس’ کہا جاتا ہے ۔ یہ کیفیت والدین سے بچوں تک آتی ہے اور نوجوانوں میں غیرسرطانی رسولیوں کی وجہ بنتی ہے ۔اس ضمن میں جسے ‘ فیمیلیئل ایڈینومیٹس پولی پوسِس’ کے شکار جانوروں پر پالک کو آزمایا گیا انہیں برف میں جمی پالک 26 ہفتے تک کھلائی گئی تو آنتوں میں رسولیاں بننے کے عمل میں غیرمعمولی کمی دیکھنے میں آئی جو بڑی اور چھوٹی آنت میں موجود تھے ۔تحقیق سے معلوم ہوا کہ پالک سے آنتوں کے بیکٹیریا کے تنوع میں اضافہ ہوا یعنی مددگار خردنامیوں کی تعداد بڑھی جو سرطان کو روکتے ہیں اور ہرخاص وعام پر اس کے مثبت اثرات مرتب ہوسکتے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے