آنکھوں کی حرکات،جسمانی و نفسیاتی کیفیات بیان کرسکتی ہیں

آنکھوں کو جسم کی کھڑکی کہا جاتا ہے اور اسی لیے کسی مشین الگورتھم سے آنکھوں کی حرکات کو نوٹ کیا جائے تو ناقابلِ یقین معلومات حاصل کی جاسکتی ہیں

برلن(نیٹ نیوز)سائنسدانوں نے دنیا بھر میں آنکھوں کی حرکات اور ٹریکنگ پر شائع ڈیٹا کا گہرائی سے تجزیہ کیا ہے ۔ جس سے یہ اہم حقائق سامنے آئے ہیں۔ یہاں تک کہ صرف آنکھوں کو ہی دیکھ کر نفسیاتی اور دماغی امراض مثلاً آٹزم کی ایک قسم، اے ڈی ایچ ڈی، اوسی ڈی اور پارکنسن سمیت کئی امراض کا پتا لگایا جاسکتا ہے ۔اس عمل میں آنکھوں کے ڈیلوں کی حرکت، پتلیوں کا سکڑاؤ اور پھیلاؤ، پلک جھپکنے کی رفتار، نگاہ جمانے اور پھیرنے کو بغور دیکھا جاتا ہے ۔ پھر یہ بھی طے شدہ امر ہے کہ آنکھوں کی پتلی کے ڈیزائن فنگرپرنٹس کی طرح مخصوص ہوتے ہیں۔ اسی طرح دماغی بوجھ کا اظہار بھی آنکھیں کرسکتی ہیں۔ تحقیق برلن یونیورسٹی کے جیکب لیون، فلوریان میولر، اور آٹو ہانس مارٹن نے کی ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے