ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ مقامی سطح پرتیار کردہ موبائل فونز کی تعداد درآمدی فونز سے زیادہ ہو گئی

 اسلام آباد: ملک میں مقامی سطح پر تیار کردہ موبائل فون کی تعداد درآمدی موبائل فون سے زیادہ ہوگئی ہے۔ 

گزشتہ 7 ماہ (جنوری تا جولائی 2021) کے دوران،پاکستان میں موبائل بنانے والے اداروں نے ایک کروڑ 22 لاکھ 70  ہزار موبائل فون تیار کئے جب کہ اسی عرصے میں درآمد شدہ موبائل فون کی تعداد 82 لاکھ 90 ہزار ریکارڈ کی گئی یہ رجحان پی ٹی اے کے موبائل ڈیوائس مینوفیکچرنگ (ایم ڈی ایم) اجازت ناموں سے متعلق ریگولیٹری نظام کی مثبت عکاسی ہے۔

پی ٹی اے کا کہنا ہے کہ ریگولیٹری نظام متعارف کروانے کے پہلے ہی سال کے 7 ماہ کے عرصہ میں ایک کروڑ 22 لاکھ 70 ہزار موبائل فون تیار ہوئے، مقامی سطع پر تیار ہونے والے موبائل فونز میں 48 لاکھ 70 ہزار فور جی اسمارٹ فونز بھی شامل ہیں، موبائل مینوفیکچرنگ پالیسی سمیت سازگار حکومتی پالیسیوں کی بدولت اور ڈیوائس آئیڈینٹی فکیشن رجسٹریشن اینڈ بلاکنگ سسٹم (ڈی آئی آر بی ایس) کے کامیاب نفاذ کے بعد پاکستان میں مقامی سطح پر موبائل بنانے کے لیے سازگار ماحول پیدا ہوا، اس سے پاکستان کے موبائل فون تیاری کے نظام پر بھی مثبت اثرات مرتب ہوئے، جس کی بدولت جعلی ڈیوائس مارکیٹ کا خاتمہ اور تجارتی اداروں کو برابرمواقع میسر آئے۔

پی ٹی اے اعلامیے کے مطابق ہر قسم کی ڈیوائس کی درآمدات کے لیے یکساں قانونی ذرائع کی موجودگی سے صارفین کے اعتماد میں بھی اضافہ ہوا، حکومت پاکستان کی جانب سے مینوفیکچررز کو پاکستان میں اپنے یونٹ کے قیام کے حوالے سے ایک جامع موبائل مینوفیکچرنگ پالیسی متعارف کرائی گئی، اس پالیسی کی روشنی میں پی ٹی اے نے 28 جنوری 2021 کوموبائل ڈیوائس مینوفیکچرنگ (ایم ڈی ایم) ریگولیشنز جاری کیں، جن کےتحت اب تک 26 کمپنیوں کو موبائل تیار کرنے کا اجازت نامہ جاری کیا گیا ہے، ان کمپنیوں میں مشہور برانڈز جیسا کہ سام سنگ، نوکیا، اوپو، ٹیکنو، انفینکس، ویگوٹل، کیو موبائل وغیرہ شامل ہیں، پی ٹی اے کے مطابق تجارتی درآمد ات کے مقابل مقامی تیاری کے رجحانات کی تفصیلات پی ٹی اے کی وہب سائٹ پر موجود ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے