پاکستان پولٹری ایسوسی ایشن کی سنٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے انتخابات میں تمام امیدوار بلامقابلہ کامیاب ہو گئے

اسلام آباد(لائیوسٹاک پاکستان) پاکستان پولٹری ایسوسی ایشن کی سنٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے انتخابات مکمل ہو گئے ، تمام امیدوار بلا مقابلہ منتخب ہوگئے ہیں۔ چوہدری حسین (چیف ایگزیکٹو مختار فیڈز)،احمد میاں جے ایم جاوید(چیف ایگزیکٹو جدید فیڈز انڈسٹریز راولپنڈی)، چوہدری فرغام طور (چیف ایگزیکٹو ستلج فیڈز لاہور)،احمد بلال(چیف ایگزیکٹو سپریم فارمز لمیٹڈ) اور عامر علی(چیف ایگزیکٹوممتاز فیڈز اینڈ الائیڈ پروڈکٹس پرائیویٹ لمیٹڈ) نادرن زون سے کارپوریٹ ممبران منتخب ہوئے ہیں جبکہ ملک ساجد اعوان(چیف ایگزیکٹو المزمل ٹریڈرز لاہور)، چوہدری تحسین نصرت (چیف ایگزیکٹو سی ایم آئی پولٹری فارم لاہور)اور انیقہ خان (چیف ایگزیکٹو نیوٹری ٹیک لاہور)ایسوسی ایٹ کلاس سے نادرن زون میں بلا مقابلہ منتخب ہوئے۔

سدرن زون سے ڈاکٹر ظفر السلام صدیقی(چیف ایگزیکٹو مرجان فیڈز کراچی) اور محمود احمد(چیف ایگزیکٹو سونا فیڈز) کارپوریٹ کلاس سے بلا مقابلہ منتخب ہوئے۔ داد خان (سندھو پولٹری سروسز کراچی)،محمد اسحاق(چیف ایگزیکٹو الکریم ٹریڈرز انٹرنیشنل کراچی)، عماد شکیل صدیقی(چیف ایگزیکٹو وائٹ ورلڈز پولٹری فارم کراچی)، محمد جاوید اسلم(چیف ایگزیکٹو پولٹری انٹرنیشنل کراچی) اور بلال مغل(چیف ایگزیکٹو ایم عبداللہ ٹریڈرز کراچی) سدرن زون سے ایسوسی ایٹ کلاس کی نشستوں پر منتخب ہوئے۔انتخابات میں بزنس گروپ اور فاﺅنڈر گروپ کے مابین غیر رسمی سمجھوتہ ہوا جس کے بعد تمام دیگر امیدواران نے اپنے کاغذات واپس لے لئے۔ اب سنٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے ممبران مرکزی چیئرمین کا انتخاب کریں گے جو کراچی سے ہو گا اس کے ساتھ ساتھ مرکزی وائس چیئرمین کا انتخاب بھی کیا جائے گا جو لاہور سے ہو گا ۔ وائس چیئرمین نادرن ریجن کا انتخاب بھی لاہور سے ہو گا اور اس کے ساتھ ساتھ وائس چیئرمین سدرن زون کا انتخاب بھی کراچی سے ہو گا۔ نیوز اینڈ ویوز کی اطلاع کے مطابق اس سال المیزان فیڈز کے چیف ایگزیکٹو چوہدری محمد اشرف کو سنٹرل چیئرمین کے طور پر منتخب کیا جائے گا جو اس سے پہلے سدرن زون کے وائس چیئرمین بھی رہ چکے ہیں۔ اس طرح مرکزی وائس چیئرمین کے طور پر فاﺅنڈر گروپ کے ملک ساجد اعوان کا نام طے پایا ہے اور نادرن زون کے وائس چیئرمین کے طور پر چوہدری محمد تحسین نصرت بزنس مین گروپ کی طرف سے سامنے آ رہے ہیں۔ دونوں گروپوں نے الیکشن کے لئے پولنگ نہ کرانے پر اتفاق کیا اور آپس میں عہدے بانٹ لئے۔ اس کا ایک فائدہ تو یہ ہے کہ اب آپس میں انتخابی عمل کے دوران جو کھینچا تانی کی جاتی تھی اس سے نجات مل گئی لیکن ووٹ کو عزت دو کا نعرہ سمجھوتے کی زد میں دب گیا ہے۔ اس وقت ضرورت اس امر کی ہے کہ پولٹری انڈسٹری کو درپیش مسائل کے حل کے لئے مشترکہ طور پر کوششیں کی جائیں اور آپس میں اختلافات کو زیادہ اجاگر نہ کیا جائے۔

پچھلے سال انتخابات میں پولنگ کے باعث کافی گرما گرمی پیدا ہوئی تھی جس کے نتیجے میں بزنس مین گروپ نے اس سال اپنے ممبران کی تعداد میں کافی اضافہ کیا مرکزی چیئرمین رانا سجاد ارشد کو اس بات کا کریڈٹ دیا جائے گا کہ انہوں نے ملتان ، فیصل آباد اور دیگر علاقوں میں ممبر سازی کی مہم چلائی اور ممبران کی تعداد میں قابل قدر اضافہ کیا۔اسی طرح چوہدری فرغام طور نے بھی اپنے طور پر ممبر سازی کی مہم میں زور شور سے حصہ لیا اور ممبران میں تعداد میں اضافہ کیا۔ باخیر ذرائع کے مطابق پولٹری فیڈ ملرز کی کوشش ہے کہ پاکستان پولٹری فیڈ ملز ایسوسی ایشن کو بھی رجسٹرڈ کروا لیا جائے ، برائلر فارمرز ایسوسی ایشن بھی پنجاب میں پوری طرح سرگرم ہے اب حکومت کے ایکٹ کے مطابق پولٹری کے شعبے میں دیگر ایسوسی ایشنز کو قانونی طور پر رجسٹریشن ملتی ہے یا نہیں اس سوال کا جواب کون دے گا۔ رجسٹریشن ملے یا نہ ملے اس کے باوجود یہ گروپ پولٹری کی سیاست میں اپنا کردار ضرور ادا کرتے ہیں اور حکومت کے ساتھ مذاکرات میں بھی برابر شریک ہوتے ہیں پاکستان پولٹری ایسوسی ایشن اگر ان تمام شعبوں کو برابر اہمیت دے اور ان کو ممبر سازی کے ذریعے اپنے اندر داخل کرے تو معاملات کسی حد تک گفت و شنید سے حل ہو سکتے ہیں لیکن پولٹری انڈسٹری کے مختلف شعبہ جات آپس میں اپنے کاروباری مفادات کے تحت کوئی بھی مشترکہ لائحہ عمل اختیار کرنے سے گریزاں رہتے ہیں۔

برائلر فارمرز کو شکایت ہے کہ فیڈ کے ریٹ بڑھا دیئے جاتے ہیں جبکہ فیڈ والے کہتے ہیں کہ اس میں ہمارا کوئی قصور نہیں اگر غذائی اجناس کے نرخ بڑھیں گے تو ریٹ بڑھانے پڑھیں گے۔ حکومت کی طرف سے مسابقتی کمیشن آف پاکستان اپنا ڈنڈا لے کر ان کے سر پر کھڑا ہے اور جب بھی کوئی بات ہوتی ہے تو وہ کارروائی کرتا ہے جس کے لئے فیڈ ملرز ہی دفاع کرتے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے